تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ بالواسطہ تمباکو نوشی کرنے والوں کے ذیابیطس کے مرض میں مبتلا ہونے کے خطرات بڑھ جاتے ہیں۔
پندرہ سال پرمحیط امریکی تحقیق سے ان تمام سابقہ دعوؤں کی تائید ہوتی ہے کہ تمباکونوشی کرنےوالے افراد میں گلوکوز برداشت نہ کرنے کا عمل شروع ہوجاتا ہے جو ذیابیطس کے مرض کی شروعات ہیں۔ چار ہزار پانچ سو بہتر افراد کو شامل تحقیق کیا گیا۔
تحقیق سے یہ بات بھی سامنے آئی کہ تمباکو نوشی کرنے والوں کے ساتھ رہنے والے افراد میں بھی

قدرے کم پیمانے پر مگر ذیابیطس میں مبتلا ہونے کے خطرات دیکھے گئے۔
برٹش میڈیکل جرنل میں شائع ہونے والی اس تحقیق میں تجویز دی گئی ہے کہ تمباکو نوشی کے زہریلے اثرات سے انسانی لبلبہ بھی متاثر ہو سکتا ہے۔ لبلبہ انسانی جسم میں انسولین کی مقدار کو متوازن رکھنے کا کام کرتا ہے۔
تحقیق کے سربراہ پروفیسر تھامس ہوسٹن نے جن کا تعلق برمنگھم ویٹرنز افئیرز میڈیکل سینٹر، البامہ سے ہے، محقیقین کے ساتھ مل کر تمباکو نوشی کرنے والے، اسے چھوڑنے والے، تمباکو نوشی کے دھویں سے متاثر ہونے والے اور ایسے لوگ جنہوں نے کبھی تمباکو نوشی نہیں کی پر تحقیق کی۔
تحقیق کاروں نے یہ پتہ لگانے کی کوشش کی کہ کتنے افراد کے جسموں میں گلوکوز کو برداشت نہ کرنے کی کیفیت ہے۔
تمباکو نوشی کرنے والے افراد کے جسم میں گلوکوز کو برداشت نہ کرنے کی کیفیت بہت زیادہ تھی اور ان میں سے بائیس فیصد افراد میں پندرہ سال کے عرصے کے دوران یہ کیفیت پیدا ہوئی۔
تحقیق میں شامل سترہ فیصد ایسے افراد جنہوں نے کبھی تمباکو نوشی نہیں کی لیکن وہ ایسے افراد کے ساتھ رہے جو تمباکو نوشی کرتے تھے، چنانچہ ان افراد میں بھی گلوکوز کو برداشت نہ کرنے کی کیفیت دیکھی گئی۔ ان کا موازنہ ان بارہ فیصد افراد سے کیا گیا جنہوں نے کبھی تمباکو نوشی نہیں کی یا ایسے افراد کے ساتھ نہیں رہے ان میں بھی محقیقین کا کہنا ہے کہ ذیابیطس کے مرض میں مبتلا ہونے کے خطرات پائےگئے۔
تمباکو نوشی سے ذیابیطس کی شرح میں اضافہ ہو رہا ہے
تحقیق دانوں کا کہنا ہے کہ تمباکو نوشی کرنے والوں کے ساتھ رہنا بھی ذیابیطس میں مبتلا ہونے کے ایک اہم عنصر کے طور پر سامنے آیا ہے اور اگر مزید تحقیق سے مذکورہ خدشے کی تصدیق ہو گئی تو پالیسی ساز اس بارے میں حاصل نتائج کو ’پیسو سموکنگ‘ کے بارے میں قانون سازی کے لیے استعمال کرسکتے ہیں۔
برطانیہ میں ذیابیطس کی ماہر ذو ہیریسن کا کہنا ہے’ہم سب یہ بات جانتے ہیں کہ تمباکو نوشی کرنا یا اس کے دھوئیں میں رہنا خطرناک ہے‘۔
ان کا کہنا ہے کہ ذیابیطس کی شرح میں وقت کے ساتھ بڑی تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے اور ہمارے معمولات زندگی اس سلسلے میں اہم عنصر ہیں اور اگر موجودہ صورت حال برقرار رہی تو بہت جلد ہم لوگوں میں آنکھوں کی بینائی کا کم ہونا یا پھر نوجوانوں میں ذیابیطس کی وجہ سے جسمانی اعضاء کو کاٹنے کا سلسلہ دیکھیں گے۔
تمباکو نوشی کے عمل کی حمایت کرنے والےگروہ ’فارسٹ‘ کے ترجمان کا کہنا ہے کہ ذیابیطس کے بہت سے عوامل ہیں۔ بالواسطہ تمباکو نوشی کے بارے میں بہت سی متضاد رپورٹیں ہیں لیکن ابھی تک کسی قسم کا کوئی ثبوت نہیں کہ بالواسطہ تمباکو نوشی کا صحت پر کوئی اثر پڑتا ہے۔
تاہم ان کا کہنا ہے کہ کسی کو زبردستی تمباکو نوشی کرنے والے افراد کے ساتھ رہنے پر مجبور نہیں کیا جا سکتا اور اسی مقصد کے لیے فارسٹ گروپ نے تمباکو نوشی کے لیے ایک حصہ مقرر کرنے کے لیے رائے عامہ کو ہموار کیا تاکہ دھویں سے ان افراد کو بچایا جا سکے جو خود تمباکو نوشی نہیں کرتے۔

Customer Service (Pakistan) +92-313-99-77-999
Helpline +92–30-40-50-60-70
Customer Service (UAE) +971-5095-45517
E-Mail [email protected]
Dr. Hakeem Muhammad Irfan Skype ID alshifa.herbal

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *