Eucalyptus Tree, Oil

سفیدہ کا تیل ، یوکلپٹس آئل
یوکلپٹس ، سفیدہ کا درخت اسکا آئل جوکہ ۔ اینٹی سیپٹک مادہ ہے۔ زکام اور انفلوئز کے لیے بھی استعمال کیا جاتا ہے
دوسوپچاس گرام سے کم آرڈر بُک نہیں ہو گا 250 گرام سے لے کر 40 کلو تک آرڈر دے سکتے ہیں پاکستان میں ڈلیوری ایک دن میں اور پوری دنیا میں کہیں بھی ڈلیوری 10 دن میں

 

We deliver Premium Quality Herbs At your door step

Price: On Call And Email


Urdu Name : Safeda Drakht, (سفیدہ درخت)


Punjabi Name : Safeday ka Drakht, (سفیدے کا درخت)


Arabic Name : Aokalbtus (أوكالبتوس) Alaukalbtus (الأوكالبتوس) Kalbtus ( كَالِبتوس)

Aukalbtus aariz alwrq (أوكالبتوس عريض الورق) Shajrat alhumie (شجرة الحمى)

Alyukalibtus (اليوكاليبتوس) Qalmtus (قالِمتوس) Qalam tuz ( قلم طوز)


Persian Name : Akaliptus (اکالیپتوس) Akaliptus neeli (اکالیپتوس نیلی)


Hindi Name : Nilgiri, (نیلگیری)


English Name : Tasmanian Blue Gum (تسمانین بلیو گم) Eucalyptus (یوکلپٹس)

Blue Gum Tree (بلیو گم ٹری) Fever Tree (فیور ٹری)


Latin name : Eucalyptus globulus Bauer (یوکلپٹس گلوبلس باؤر)


Sanskrit Name : Sugandhapatra (سوگندھپترا) Tailapatra (ٹیلاپترا)

Tailaparni (ٹیلاپرنی)


Telugu Name : Neelagiri chettu (نیلاگیری چٹو)


Kannada Name : Neelagiri, (نیلاگیری)


Marathi Name : Nilgiri, (نیلگیری)


Chinese Name : An yeh, (ان یہ)


French Name : Eucalyptus Gummibaum, ( یوکلپٹس گمیبم)


German Name : Eukalyptus (یوکلپٹس) Blaugummibaum (بلاگوئمیببئم)

Eukalyptusbaum (یوکلپٹس بئم ) Fieberbaum (فیبربئم)

Fieberheilbaum (فیبرھیلبئم)


ریسرچ ، تحریر و ترتیب حکیم محمد عرفان
اس آرٹیکل کو کاپی کرنے والے کے خلاف فوری قانونی کاروائی کی جائے
گی کیونکہ ایک آرٹیکل کو مکمل کرنے میں کئی دن سخت محنت ہوتی ہے

Product Description

Eucalyptus – Health Benefits and Side Effects

 

 

Distribution and Habitat:Eucalyptus globulus is native to the state of Tasmania, Australia.

It prefers gentle, sloping coastal hills or protected valleys, good quality coastal soils and plenty of sun. It is adverse to lower temperatures, once established it is drought tolerant, and it can often regenerate after wildfires.

Eucalyptus globulus is one of the few medicinal plant species adopted by the European settlers in Australia. It has spread globally and is now cultivated in California, in Florida, and in many of the Mediterranean countries.

It has been planted in some African countries on the assumption that it can help to combat malaria outbreaks because of the trees ability to remove large amounts of water from the soil and drying out moist areas where mosquitoes would usually inhabit. But as a result, some species of eucalyptus trees have become weed-like, like in South Africa.

Plant Description: The eucalyptus tree can grow up to 70 meters in height and has a trunk diameter of 2 meters. Much of the trunk is smooth as the bark sheds in strips.

The mature leaves are narrow and dark green, with blue-grey juvenile leaves, which is where the ‘blue gum’ name originates. Between September to December it flowers with single flowers, which are followed by woody fruits.

Plant Parts Used: It is the leaves of the Eucalyptus tree that contain the ingredients used for therapeutic purposes, such as the essential oil. It is usually collected from the dried leaves.

The oil is clear or pale yellow and is very strong smelling

Eucalyptus Globulus Fruits – Attribution: Curtis Clark

Therapeutic Uses, Properties and Benefits of

Eucalyptus Globulus

The primary product from the Eucalyptus globulus is its essential oil, which has a diverse range of therapeutic uses. The oil contains eucalyptol (1,8-cineol).

It is also a valuable source of kinos, a plant gum produced by various plants and trees, widely used in medicine and tanning lotions.

The essential oil is a popular decongestant remedy for upper respiratory infections and inflammatory infections, such as bronchitis. In these instances, it is used as an inhalant, where it reaches the lungs and bronchioles to help soothe congestion and chest infections.

It is also used in this way for colds and influenza or externally as a chest rub. If taken internally as in a lozenge or as cough mixture it is in very diluted state and in smaller dosages.

Eucalyptus globulus is also used as a rubefacient, a topical treatment that causes redness of the skin because the capillaries dilate and blood flow increases to the skin. It creates a warming, comforting sensation and in some cases a slight pain relief.

t is often used in an ointment, cream or gel as a topical treatment for muscle and joint pain and acne.

It has anti-bacterial and anti-viral properties and is used in cold sore creams, as a remedy for malaria, to help with fevers, and has been shown to complement antibiotics.

In a study looking at the combined effect of antibiotics, essential oils and extracts from Eucalyptus globulus, healing was improved by 55%, when compared to using the antibiotic alone.

Further studies were carried out on antibiotic resistant bacteria where the essential oil was found to have an inhibitory effect on the bacteria. This suggests that the plant has very useful bioactive compounds.

The eucalyptol found in the oil is responsible for many of the health benefits of the plant. It has antiseptic and anti-inflammatory properties and can be very helpful in the treatment of upper and lower airways diseases, such as asthma.

The plant contains tannins and phenolic compounds, ingredients used extensively in disinfectants.

It also contains terpenoids, which have been shown in some studies to have an anti-HIV effect. Research on its therapeutic value on HIV is dated and should be approached with caution.

Eucalyptus has been thought to have an anti-diabetic effect since the early 1900s, however modern studies have only studied this using animal models where it has been shown to lower plasma glucose levels, enhance insulin secretion, reduce blood glucose, inhibit intestinal fructose absorption and suppress adiposity.

While it has been demonstrated numerous times that it has a hypoglycemic effect, further studies need to be carried out with human subjects.

Preparation and Dosage

Used internally, the essential oil can be highly poisonous and even deadly given a large enough dose. There have been reports of fatalities when only 4-5 ml had been ingested and 30 ml of the oil will most likely cause death.

Because the safe daily dose is so small, between 0.3 to 0.6grams, it is not advised to use eucalyptus oil in home-made preparations which are to be ingested, unless the measurement is very accurate.

Also, it is not safe to take eucalyptus oil over a long period of time, e.g. a year or more.

The daily dose of eucalyptus in infused tea, tincture or inhalant varies in the literature, from 2.5 grams to 4 to 6 grams for oral use.

The tea is to be mixed with hot water and left to steep for about 10 minutes.

A tincture is produced with 45% ethanol, and the safe daily dose is 5 to 20mls daily.

 

Safety and Side Effects

The essential oil from Eucalyptus globulus is usually safe when used externally but it is highly toxic if taken internally in too larger dose.

It can cause nausea and vomiting, abdominal pain, bronchospasm, convulsions, cyanosis, delirium, dizziness, epigastric burning, myosis, muscular weakness, respiratory problems, tachypnea with severe respiratory depression, and a feeling of suffocation.

Eucalyptus oil can interfere with hypoglycemic therapy and with type II diabetes treatment due to its glucose-lowering effect.

It can also interfere with the foreign substance degrading enzyme system in the liver, affecting the efficiency of other medicines.

It can affect the central nervous system, producing a loss of reflexes, loss of consciousness and may cause progression to a coma.

Eucalyptus oil should not be used when pregnant or breastfeeding.

 

یوکلپٹس (سفیدہ) کا تیل

 

یوکلپٹس کا تیل جسم میں تیزی سے جذب ہوجاتا ہے اس کا طاقتور “ایکلپٹول کمپاؤنڈ” ایک “ویزوڈیلیٹر” کے طور پر کام کرتا ہے جو کہ خون کی گردش کو تیزی فراہم کرتا ہے جس کے تحت ہڈیوں میں کھچاؤ، درد اور سوزش کی شکایت ختم ہوجاتی ہے

 اسے گلے کی تکلیف اور اس کے ورم و خراش کیلئے غرغرے کی دوائوں میں بھی شامل کیا جاتا ہے، کھانسی کے سیرپس اور گلے کی گولیوں میں اسے شامل کرنے سے گلا اور سینہ صاف ہوجاتا ہے درد اور چوٹ کی جگہ اس کی مالش سے آرام ہوتا ہے۔

ناصرف کراچی بلکہ پورے پاکستان میں سڑکوں، پارکوں، باغوں اور کھیل کے میدانوں میں ایک بلند و بالا درخت دکھائی دیتا ہے، اپنے لمبے قد، دبیز پتوں اور سفید تنے کے باوجود جسے لوگ نظر انداز کردیتے ہیں، سفید تنے کی وجہ سے لوگ اس کو سفیدہ کا درخت کہتے ہیں، لیکن اس درخت کا اصلی نام ’’یوکلپٹس‘‘ ہے۔ 1860ء میں بحیرہ روم کے آس پاس کے جزیروں میں سفیدے کے پتوں سے بخار کے علاج کا طریقہ بہت مشہور تھا۔ یہ درخت بڑی تیزی سے بڑھتا ہے چنانچہ پاکستان میں سڑکوں اور میدانوں میں یہ بڑی تیزی سے بڑے ہوئے۔ کراچی کی اکثر سڑکوں پر ان کا گھنا سایہ راحت و سکون کا سامان کرتا ہے۔ سفیدے کا شمار لمبے درختوں میں ہوتا ہے، یہ درخت 475 فٹ تک ریکارڈ ہوا ہے، یعنی 10 منزلہ عمارت کے برابر۔ سفیدے میں ایک قدرتی کیمیائی جزیو کلپٹول  پایا جاتا ہے جو زخموں کو ٹھیک کرنے میں بہت مفید اور موثر ثابت ہوتا ہے، یہ بہترین جراثیم کش کا کام کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے، سینے سے بلغمی مواد نکالتا ہے، دمہ کے دورے، بند ناک اور بلغم کی وجہ سے دماغ کی سنسناہٹ کو دور کرتا ہے، یہ درخت اپنے تیل کی وجہ سے بڑی اہمیت اختیار کرگیا ہے۔ سفیدے کی تقریباً 25 اقسام سے یہ تیل کشید کیا جاتا ہے اور اس تیل کی بالعموم تین قسمیں ہیں: 1) طبی مقاصد کیلئے استعمال ہونے والا تیل۔ 2) صنعتی مقاصد کیلئے استعمال ہونے والے تیل۔ 3) خوش بودار تیل، یوکلپٹس آئل تازہ پتوں سے کشید کیا جاتا ہے۔ جراثیم کشی میں غالباً کوئی نباتاتی تیل اس سے زیادہ موثر نہیں ہوتا۔ انگلستان اور دیگر یورپی ملکوں میں اس کا تیل چکن پاکس کے دانوں پر لگاتے ہیں اس کے استعمال سے یہ دانے بہت جلد سوکھ جاتے ہیں اور جلد پر کوئی نشان بھی نہیں چھوڑتے، اس کا تیل چھوٹے کیڑے مکوڑوں کو بھی ہلاک کردیتا ہے‘ اسے گلے کی تکلیف اور اس کے ورم و خراش کیلئے غرغرے کی دوائوں میں بھی شامل کیا جاتا ہے، کھانسی کے سیرپس اور گلے کی گولیوں میں اسے شامل کرنے سے گلا اور سینہ صاف ہوجاتا ہے درد اور چوٹ کی جگہ اس کی مالش سے آرام ہوتا ہے۔ گوند کے لعاب میں اس تیل کو خوب ملاکر اس ایملشن کے پلانے سے دق و سل کے مریضوں کو آرام ہوتا ہے، گلے کی خراش، نزلہ زکام اور سینے کی کی جکڑن کیلئے سینے اور گلے پر اس تیل کی مالش کرنا ایک مفید عمل ہے۔ بلغمی کھانسی میں یہ خاص طور پر مفید ثابت ہوسکتا ہے، کھولتے ہوئے پانی میں اس کے چند قطرے ڈال کر بھاپ لینے سے بند ناک کھل جاتی ہے۔ گلے اور حلق میں جما ہوا بلغم خارج ہوجاتا ہے۔ تقریباً ہر قسم کے بام میں بھی یہ تیل شامل کیا جاتا ہے، اس تیل کو ویسلین میں ملاکر لگانے سے پھٹے ہوئے ہاتھ پائوں، جلد اور سر کی خشکی کو بھی آرام ہوسکتا ہے۔
لوبلڈ پریشر میں بھی آپ کامیابی سے سفیدے کو استعمال کرسکتے ہیں، اس میں سفیدہ استعمال کرنے کا طریقہ یہ ہے کہ جب آپ کا بلڈ پریشر کم (Low) ہوتو آپ دو پتے سفیدے کے منہ میں رکھ کر چبائیں۔ اس کا رس نگل لیں مگر پھوک پھینک دیں، ان شاء اللہ بلڈپریشر نارمل ہوجائے گا۔ اگر پتے چبا نہیں سکتے تو 15 سے 20 عدد پتے لے کر آدھا گلاس پانی میں ڈال کر گرائنڈ کرلیں پھر چھان کر اس جوس کے دن میںتین چمچ دو سے تین بار پئیں۔ دل کی بیماریوں مثلاً انجائنا، خفقان، گھبراہٹ اور جنون میں سفیدے کا استعمال کچھ اس طرح ہے کہ اس کے تیس عدد پتے لے کر 8 گلاس پانی میں ابالیں، جب 5 گلاس پانی رہ جائے تو اسے اتارکر ٹھنڈا کرکے چھان لیں اور کسی بوتل یا جگ میں ڈال کر رکھ دیں، اس جوشاندہ کو آدھا گلاس نیم گرم کرکے دن میں 4 سے 5 بار پینے سے نتائج آپ خود محسوس کریں گے۔ کولیسٹرول کی زیادتی میں بھی یہ طریقہ فائدہ مند ہے۔ سفیدے کے آٹھ پتے لے کر اسے توے پر سینک لیں بغیر جلائے، اب انہیں ایک گلاس پانی میں رات بھر بھیگا رہنے دیں، صبح نہار میں یہ پانی چھان کر پی لیں۔ یہ شوگر یا ذیابیطس میں اکسیر ہے۔ تجربات سے ثابت ہوا ہے کہ Eucalyptol پھیپھڑوں کی چھوٹی نالیوں کو کھول کر بلغم کے اخراج کا باعث ہے، یہی وجہ ہے کہ ٹی بی میں بھی سفیدے کو استعمال کرکے کامیاب نتائج لے سکتے ہیں ۔ سفیدے کے وہ پتے جو سائے میں خشک کئے گئے ہوں ان کی دھونی بھی سینے سے بلغم کے اخراج میں معاون ہوتی ہے۔ آپ اگر آپ اپنی جلدی بیماریوں سے محفوظ رہنا چاہتے ہیں تو سفیدے سے غسل کریں اس کا طریقہ یہ ہے کہ سفیدے کے پتے کسی جالی دار کپڑے میں باندھ کر کسی ٹب میں رکھ دیں اور اس ٹب میں گرم پانی تقریباً 20 منٹ تک کیلئے بھردیں تاکہ سفیدے کے پتے باتھ ٹب میں اپنا تیل چھوڑیں، پھر آپ انتہائی آرام سے نہائیں اور اس کپڑے کو جس میں ا ٓپ نے پتے باندھ رکھے ہیں پورے جسم پر پھیر لیں۔ تقریباً ایک دو مرتبہ ہربل باتھ کا یہ طریقہ ہلکی پھلکی جلدی بیماریوں میں شفاء کا کام دے گا اور آپ کو تازہ دم اور چست کردے گا۔

چکنی جلد کے بلیک ہیڈز اور وائٹ ہیڈز دور کرنے کیلئے مفید نسخہ ۔

نیم گرم پانی ۔ 1 کپ
لاہوری نمک ۔ 1 چٹکی
ہائیڈروجن پر آکسائیڈ ۔ 1 کھانے کا چمچ
یوکلپٹس (سفیدہ) کا تیل ۔ 30 قطرے

تمام چیزوں کو اچھی طرح مکس کرکے آمیزہ بنالیں یہ آپ کا کلینزر بن جائے گا ۔ اسے فریج کے اندر حفاظت سے رکھ دیں ۔ دن میں 2 مرتبہ اس کلینزر سے اپنا چہرہ صاف کریں ۔ اس سے آپ کے چہرے کی تمام میل کچیل صاف ہوجائے گی اور چہرہ بلیک ہیڈز اور وائٹ ہیڈز سے بھی بچا رہے گا ۔
اگر اشیاء دستیاب نہ ہوں تو ڈولشے ابٹن استعمال کریں ۔ ڈولشے ابٹن قدرتی اجزاء سے تیار شدہ ہے اور کیمیکل سے پاک ہے ۔ ڈولشے ابٹن کیل، چھائیاں، داغ دھبے، دانے، بلیک ہیڈز اور وائٹ ہیڈز دور کر کے چہرے کو نرم و ملائم اور چمکدار بناتا ہے ۔ چہرے کے ڈیڈ سیلز کو ختم کرتا ہے اور قدرتی خوبصورتی کو بحال کر کے چہرے کو تازگی بخشتا ہے ۔

 

Customer Service (Pakistan) +92-313-99-77-999
Helpline+92–30-40-50-60-70
Customer Service (UAE)+971-5095-45517
E-Mailinfo@alshifaherbal.com
Dr. Hakeem Muhammad Irfan Skype IDalshifa.herbal

Reviews

There are no reviews yet.

Be the first to review “Eucalyptus Tree, Oil”



  • error: Content is protected !!